Take a fresh look at your lifestyle.

سائبر کرائم:آکسیمٹر ایپ سے محتاط رہنا لازمی انگلی لگتے ہی بینک سے رقم غائب

0

کولکاتا،/13اگست:بازار میں اندھا دھند فروخت کی جانے والی مختلف کمپنیوں کے آکسیمٹرز کے معیار کے بارے میں پہلے ہی سوالات موجود ہیں۔ اب بہت ساری آکسیمٹر ایپ مارکیٹ میں آچکی ہیں ، جن میں سے بیشتر جعلی ہیں۔ اب یہ نیا مسئلہ کولکاتا پولیس کے لئے درد سرپیدا ہوگیا ہے ۔ پولس ذرائع کے مطابق سائبر برانچ میں گذشتہ دنوں کئی شکایات درج کی گئیں ، جس میں یہ دعویٰ کیا گیا ہے کہ کسی شخص نے بینک سے ان کی رقم ہڑپ لیاہے ، یہ سوچ کر کہ ان ایپس پر انگلی رکھنے سے جسم میں آکسیجن کی سطح کی پیمائش ہوسکتی ہے۔ کسی نے شکایت کی ہے کہ ذاتی تصاویر ، دستاویزات چوری ہوگئی ہیں۔ وہیںعلی پور روڈ کے ایک رہائشی نے دعوی کیا کہ آکسیمیٹر ڈیوائس کی تلاشی کے دوران ، اسے آکسی میٹر موبائل ایپ کے بارے میں معلوم ہوا جو جسم میں آکسیجن کی مقدار کی پیمائش کرسکتا ہے۔ دیبنگشو گھوش نامی شخص نے پولیس کو بتایا کہ جیسے ہی اس نے ایپ ڈاو¿ن لوڈ کی اور اسے استعمال کرنا شروع کیا ، اس سے کال لاگ اور فوٹو فولڈر سمیت بہت سی چیزوں کو استعمال کرنے کی اجازت طلب کی گئی۔ انہیں یہ کام دوسرے ایپس کی طرح پایا۔ اس کے بعد ایپ کی ہدایت کے مطابق ، فون کی سیٹنگ کو تبدیل کرتے ہوئے ، کیمرے پر انگلی چھونے سے فون بند کردیا گیا۔ سروس سینٹر کا دورہ کرنے اور فون کھولنے کے بعد انہیں ایک پیغام ملا کہ اس کے بینک اکاو¿نٹ سے 60000 روپے نکال لئے گئے ہیں۔ پولس میں درج شکایت کے مطابق ، ایک نوجوان خاتون نے دعویٰ کیا ہے کہ اس طرح کی ایپ کا استعمال کرکے اس کی ذاتی تصویر غائب ہوگئی ہے۔ اسے دھمکی دی جارہی ہے کہ اسے سوشل میڈیا پر پوسٹ کردیں گے ۔ ایک اسکول ٹیچر نے شکایت کی ہے کہ اس کا شوہر سالٹ لیک کے سیکٹر پانچ میں ایک نجی کمپنی میں ملازم ہے۔ کمپنی کی کچھ اہم دستاویزات اس کے موبائل میں تھیں۔ آکسیمٹر ایپ کا استعمال کرتے وقت تمام معلومات کا اشتراک کیا جاتا ہے۔ پولس ذرائع کے مطابق اس طرح کے ایپ کوویڈ۔19 کے انفیکشن میں اضافے کے ساتھ پچھلے 3 ماہ میں اندھا دھند مارکیٹ میں آچکے ہیں۔ پولس نے اپنی تفتیش شروع کردی ہے۔
کلکتہ میڈیکل کالج اسپتال کے معالج ارونشوتعلقدار کا کہنا ہے کہ مارکیٹ میں آکسیمٹر ڈیوائس فروخت ہونے کی بہت سی شکایات ہیں۔ اگرچہ انہیں ایسی اطلاعات کے بارے میں کوئی اندازہ نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ شعاعی شریانوں کے ذریعے انگوٹھے اور شہادت کی انگلی میں خون کی گردش ہوتی ہے ، جبکہ خون کو النار دمنی کی درمیانی انگلی کے ذریعے چھوٹی انگلی اور رنگ کی انگلی میں لے جایا جاتا ہے۔ ایک ہی وقت میں ، خون کو درمیانے درجے میں ریڈیل اور النار دونوں شریانوں کے ذریعے گردش کیا جاتا ہے۔ اسی لئے آکسی میٹر کے معاملے میں میڈین کو استعمال کرنا چاہئے۔انڈین اسکول آف اینٹی ہیکنگ کے ڈائریکٹر سندیپ سین گپت کا کہنا ہے کہ یہ مکمل طور پر جعلی کیس ہے۔ ایپس جعلی ہیں ، اسی وجہ سے انگوٹھے کو چھونے کی کوشش کی جارہی ہے۔ موبائل لاک کرتے وقت صارفین انگوٹھے کا زیادہ استعمال کرتے ہیں۔ اس کے نتیجے میں آکسیجن کی پیمائش کرنے کےلئے کیمرہ میں انگلی کی تصویر لینا آسان ہوگا۔ تاہم ، صارفین کو موبائل کو لاک کرتے وقت انگلی کو چھونے کے بجائے پن نمبر استعمال کرنا چاہئے۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Leave A Reply

Your email address will not be published.