Take a fresh look at your lifestyle.

فوجیوں کے متعلق میں بولنے کی اجازت نہیں حکومت بحث سے خوفزدہ:ادھیر

0

کولکاتا،15،ستمبر:منگل کو کانگریس نے الزام لگایا کہ لوک سبھا میں وزیر دفاع راجناتھ سنگھ کے بیان کے بعد وہ فوجیوں کے اعزاز میں اپنا نکتہ رکھنا چاہتی ہیں لیکن حکومت نے ایسا نہیں ہونے دیا۔ پارٹی کے رہنما ادھیر رنجن چودھری نے بھی حکومت پر بحث کرنے سے خوفزدہ ہونے کا الزام لگایا اور سوال کیا کہ وزیر اعظم نریندر مودی ایوان میں کیوں موجود نہیں تھے جب وزیر دفاع نے یہ بیان دیا اور فوجیوں سے اظہار یکجہتی کرنے کی قرارداد کی بات کی۔ وزیر دفاع کے اس بیان کے بعد کانگریس کے ممبران پارلیمنٹ نے ایوان سے واک آو¿ٹ کیا کہ انہیں اس ایشو پراپنا بیان رکھنے کی اجازت نہیں ہے اور پارلیمنٹ کمپلیکس میں مہاتما گاندھی کے مجسمے کے سامنے مظاہرہ کرتے ہوئے حکومت کے خلاف نعرے بازی کی۔ کچھ ممبران پارلیمنٹ کے ہاتھوں میں پلے کارڈ تھے ، جس پر انہوں نے ‘من کی بات ، اب چین کی بات’ سنا تھا۔ چودھری نے نامہ نگاروں کو بتایاکہ کانگریس کےلئے ملک اعلیٰ ہے۔ہماری فوج کی جرا¿ت اور بہادری ہمارے لئے باعث افتخار ہے۔ جب حکومت کی جانب سے لداخ کا حوالہ دیتے ہوئے معاملے کا ایوان میں ذکر کیا گیا تو ہم نے اپنے فوجیوں کےلئے اپنا احترام ظاہر کرنے کےلئے ایک منٹ کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ بہت سے سوالات ہیں ، لیکن ہم جانتے ہیں کہ حکومت سوالات کے جوابات نہیں دینا چاہتی ہے۔کانگریس کے رہنما کے مطابق اس بحث پر اس وقت کے وزیر اعظم پنڈت جواہر لال نہرو نے 1962 کی جنگ کے دوران اٹل بہاری واجپئی کی درخواست پر اتفاق کیا تھا اور یہ بحث پارلیمنٹ میں ہوئی تھی۔ لیکن اس حکومت نے ہماری کوئی درخواست قبول نہیں کی۔ چودھری نے کہا کہ ہم جانتے ہیں کہ حکومت ہمارے سوالوں سے خوفزدہ ہے۔ انہوں نے سوال کیاکہ اگر راج ناتھ سنگھ نے ایوان میں جوانوں کے اعزاز میں تجویز پیش کی تھی ، تو وزیر اعظم کو ایوان میں ہونا چاہئے تھا۔ وہ ایوان میں کیوں موجود نہیں تھے؟ چودھری نے الزام لگایا کہ حکومت بحث سے خوفزدہ ہے کیونکہ اس کے پاس کوئی جواب نہیں ہے۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Leave A Reply

Your email address will not be published.