Take a fresh look at your lifestyle.

مرکزکاریاستوں کو جی ایس ٹی کے اختیارات پر اتفاق کرنے کےلئے سیاسی طاقت کا استعمال : امیت مترا

کولکاتا،17،ستمبر: جی ایس ٹی معاوضہ کیس میں مرکزی حکومت کو نشانہ بناتے ہوئے ، بنگال کے وزیر خزانہ امیت میترا نے الزام لگایا کہ ریاستوں کو محصولات کے خسارے کو پورا کرنے کے لئے دیئے گئے جی ایس ٹی کے اختیارات پر راضی کرنے کےلئے سیاسی طاقت کا استعمال کیا جارہا ہے۔ میترا نے کہا کہ اگر جی ایس ٹی کونسل کے اگلے اجلاس میں مرکز کے ذریعہ دیئے گئے دو آپشنز ووٹ ڈالنے پر مجبور ہیں تو یہ ہندستان کےلئے تاریخی غلطی ہوگی۔ مرکز نے ریاستوں کو دو آپشن دیئے ہیں ، جس کے تحت وہ رواں مالی سال میں 2.35 لاکھ کروڑ روپے کے تخمینے والے خسارے کےلئے مارکیٹ سے قرض لے سکتے ہیں۔ مرکزی وزیر خزانہ نرملا سیتارامن نے 27 اگست کو جی ایس ٹی کونسل کے 41 ویں اجلاس کے بعد کہا۔ یہ کوڈ 19 ایک قدرتی تباہی ہے ، جس نے معیشت اور جی ایس ٹی کو متاثر کیا ہے۔مترا نے نیوز ویب سائٹ کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ جی ایس ٹی کونسل کے پانچ گھنٹے اجلاس میں جو ہوا ، اس میں کسی بھی آپشن پر بات نہیں کی گئی۔ اچانک اجلاس کے اختتام پر دو آپشنز رکھے گئے اور میٹنگ ختم ہوگئی۔ دوسرے الفاظ میں آپ ریاستوں کو دو اختیارات میں سے کسی ایک کا انتخاب کرنے پر مجبور کررہے ہیں ، جبکہ اس میں تین یا چار اختیارات ہوسکتے ہیں۔ ہمارے خیال میں ایک تیسرا آپشن ہے ، لیکن کوئی سننے کو تیار نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ اب سیاسی طاقت کا استعمال کیا جارہا ہے ، جسے میں بڑی طاقت پسندی کی پٹھوں کی طاقت کہوں گا ، تاکہ ریاستوں کو ایک یا دو آپشنز پر راضی کیا جاسکے۔ حکمت عملی کے طور پر میں یہ نہیں بتاو¿ں گا کہ ہم عدالت میں جائیں گے یا نہیں۔انہوں نے کہا کہ مرکز کے اقدام سے جی ایس ٹی کی بنیاد کو چیلنج کیا جائے گا ، اور اگر جی ایس ٹی کونسل تقسیم ہوگئی تو وفاقیت کے جذبے کو نقصان پہنچے گا۔ عدم اعتماد ہوگا اور رضامندی کی بنیاد پر جی ایس ٹی کا پورا استعمال مسئلہ بن جائے گا۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments are closed.