Take a fresh look at your lifestyle.

21ویں اسمبلی الیکشن کیلئے ریاستی بی جے پی میں اہم تبدیلیاں لاکٹ چٹرجی جنرل سکریٹری کے پوسٹ پر

0

کولکاتا۔ یکم جون: پوری ریاست کرونا کی کا دہشت میں آنے کے بعد اب میونسپل کا الیکشن بھی تعطل کا شکار ہوگیا ہے ۔ ریاستی الیکشن کمیشن بھی الیکشن سے متعلق پوری آگاہی و جانکاری دینے سے قاصر نظر آرہے ہیں مگر ریاستی بی جے پی اسی نامساعد حالات میں 21ویں اسمبلی الیکشن کیلئے اپنی بساط بچھانے میں مصروف نظر آرہا ہے ۔ حتی کہ اس الیکشن میں اچھا نقش چھوڑنے کیلئے ریاستی بی جے پی پارٹی میں خاصا ردو بدل بھی کیا گیا ہے ۔ پارٹی کے ریاستی سکریٹری بدھان نگر کے سابق میئر سبیا ساچی دتہ کو بنایا گیا اور ارجن سنگھ کو صدر کی ذمہ داری سونپی گئی ان کے علاوہ لاکٹ چٹرجی کو بھی ترقی دے کر پارٹی کی جنرل سکریٹری کا پوسٹ دیا گیا اور ایم پی سومترا کھاں ، بی جے پی خاتون لیڈر آگنی پال کی بھی مصروفیت بڑھیں ۔ جبکہ پرتاپ بندوپادھیائے کو ڈیموشن کردیا گیا ۔ کیونکہ جنرل سکریٹری کے پوسٹ سے انہیں بر طرف کردیا گیا۔ اب دو لوگ کو جنرل سکریٹری کا پوسٹ سونپا گیا ہے ۔ دوسری طرف ناب صدربھارتی گھوش کے حصے اور سی پی ایم سے آئی محفوظہ خاتون بھی آئی ۔ چندرا باسو کو نائب صدر کے پوسٹ سے ہٹا دیا گیا ، شیڈول ٹرائب مورچہ کے صدر کھگن مومور کو اور ایس سی کا صدر ممبر اسمبلی دلال بھر کو بنایا گیا ۔
اب مغربی بنگال بی جے پی کی نئی ریاستی کمیٹی پر نظر ڈالیں ۔ صدر شری دلیپ گھوش ، نائب صدر سبھاش سرکار ، وشوا پریہ رائے چودھری ، پرتاپ بنرجی ۔ راج کمل پاٹھک ، باپی مترا ۔ رتیش تیواری ، جئے پرکاش مجمدار ۔ ارجن سنگھ ، آنند یہ بنرجی ۔ دیپن پرمانک ،۔، بھارتی گھوش ۔ محفوظہ خاتون جنرل سکریٹری کیلئے۔ شائنتن باسو، لاکٹ چٹرجی ، جیوتر مئے مہاتو ، سنجے سنگھ ۔ رابندر ناتھ باسوسکریٹری ، توشار مکھرجی ، دیپانجن گوہا ، وویک سونکر ، سبیا ساچی دتہ ، پھالگونی پاترا، انوج چکرورتی ، سنگھ مترا چودھری ، سربر ی مکھرجی ، ارو ن ہلدار ۔ توشار گھوش ، مہیلامورچہ میں آگنی مترا پال کا جب مورچہ میں سومتراکھاں، کسان مورچہ میں ، مہادیب سرکار، ایس سی مورچہ میں، دلال بر، ایس ٹی مورچہ میں ، کھگن مومور ، اقلیتی مورچہ میں ، علی حسن ۔

ٹیلی کام کی سہولیات کو معمول پر لانے میں 15 دن لگیں گے: سادھن پانڈے
کولکاتا یکم جون۔ ریاستی صارف امور کے وزیر سادھن پانڈے نے کہا کہ امفان کے بعد بہت سارے صارفین کو ٹیلی کام کی سہولیات نہیں مل رہی ہیں۔ اب بھی صورتحال معمول پر آنے میں 15 دن لگیں گے۔ یہاں تک کہ جب ان سے یہ پوچھا گیا کہ اگر صارفین کو خدمت نہیں ملتی ہے تو انہیں کوئی معاوضہ ملے گا ، مسٹر پانڈے نے کہا کہ اس سلسلے میں اس پر غور کیا جارہا ہے۔ مسٹر پانڈے نے کہا کہ کولکاتا میونسپل کارپوریشن سے زیادہ ٹیلی کام کمپنیوں کو امفان کی تیاری کرنی چاہئے تھی۔
غور طلب ہے کہ مسٹر پانڈے کولکاتا میونسپل کارپوریشن کی بدنام زمانہ تیاریوں سے قبل کی جانے والی تیاریوں کے بارے میں تبصرے کرنے کے بعد ، اپنی پارٹی ، ترنمول کانگریس کی جانب سے دکھائے گئے تھے۔ ترنمول کے ایک اور رہنما پریش پال نے بھی مسٹر پانڈے کے بیان پر اعتراض کرتے ہوئے ایک بیان دیا۔ اس سلسلے میں ، مسٹر پانڈے نے کہا کہ وہ صرف چیتنیا مہاپربھو کے ان الفاظ کو دہرانا چاہتے ہیں جو ، ’تور چیتنیا ہوک‘ (آپ کو علم ہے)۔ اگرچہ انہوں نے یہ واضح نہیں کیا کہ یہ کس کے لئے ہے۔
مسٹر پانڈے نے کہا کہ بنگال میں کورونا کے بعد دوسری ریاستوں کے کارکن واپس نہیں جائیں گے۔ وہ 100 دن کے کام سے مطمئن نہیں ہوں گے۔ ان کے لئے کام تخلیق کرنا پڑے گا۔ 13 اضلاع میں مکتی دھارہ اسکیم چل رہی ہے۔ گاو¿ں کو وہاں کام کے ذریعے جوڑا جارہا ہے۔ دیگر اضلاع میں بانمورا کے علاوہ انعام شامل ہیں۔ گاو¿ں بنگال میں کام پیدا کرنا پڑے گا۔ اسے پورے بنگال میں پھیلانے کی ضرورت ہے۔

کولکاتا کارپوریشن شہر میں 40 ہزار پودے لگائے گی
کولکاتا1جون۔ کولکاتا میونسپل کارپوریشن (کے ایم سی) مہلک طوفان آمفان سے تباہ شدہ دارالحکومت کولکاتا میں سبز احاطہ کی بحالی کے لئے 40 ہزار درخت لگائے گی۔ میونسپل ذرائع نے سوموار کے دن اس بارے میں آگاہ کیا ہے۔بتایا گیا ہے کہ 20 مئی کو جب طوفان نے مغربی بنگال کے سمندری کنارے والے علاقوں میں دستک دی تو کولکاتا میں ہوائیں 130 سے 144 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے چلی تھیں۔ اس نے 15000 درختوں کو نقصان پہنچا ہے۔ کولکاتا میونسپل کارپوریشن نے ماحول کو ممکنہ نقصان سے بچانے کے لئے 40 ہزار نئے درخت لگانے کا فیصلہ کیا ہے۔
اس سلسلے میں موجودہ ایڈمنسٹریٹر اور کولکاتا کے سابق میئر فرہاد حکیم نے عہدیداروں کو ہدایات دی ہیں۔
اس منصوبے سے متعلق ایک رپورٹ تیار کی جارہی ہے۔ خبر یہ ہے کہ میٹروپولیٹن رہائشیوں کو اپنے رہائشی احاطے میں درخت لگانے کے لئے ترغیب دی جائیگی۔ اس کے لئے میونسپل کارپوریشن نہ صرف ٹیکس چھوٹ دے گی بلکہ درختوں کے قلم بھی دے سکتی ہے۔ کوئی حتمی فیصلہ نہیں لیا گیا ہے ، لیکن خبر یہ ہے کہ اس کا فیصلہ اسی ہفتے کیا جائے گا۔
در حقیقت طوفان آمفان کی وجہ سے ، مغربی بنگال میں ماحول کو بہت نقصان پہنچا ہے اس کی تلافی کے لئے ریاستی محکمہ ماحولیات میں ماہرین کی ایک کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔ اس کمیٹی نے ریاست کے وسیع علاقے میں بڑی تعداد میں درخت لگانے کا مشورہ دیا ہے۔ ریاستی حکومت 6 کروڑ درخت لگائے گی ان میں سے اب 40ہزار پودے کولکاتا میں لگائے جائیں گے۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Leave A Reply

Your email address will not be published.