Take a fresh look at your lifestyle.

بنگال میں کرونا مریضوں کی بڑھتی تعداد کے مقابلے بیڈ کی سخت قلت

0

کولکاتا،31جولائی:مغربی بنگال میں کرونا مریضوں کی بڑھتی ہوئی تعداد کے مقابلہ میں اسپتالوں میں بیڈ کی کمی ہے۔ زیادہ تر اسپتالوں میں کوئی بستر خالی نہیں ہوتا ہے کیونکہ متاثرہ اور بازیاب لوگوں کے درمیان ڈیٹا میں فرق ہے۔ اعدادوشمار کے لحاظ سے ریاست میں کرونا مریضوں کے علاج کے لئے کل 81 اسپتال موجود ہیں۔ ان میں سے 27 سرکاری ہیں اور اس کے ٹھیک دوگنا ہے 54 نجی اسپتال۔ ان میں کل 11،239 بستر ہیں۔ لیکن مثبت مریضوں کی تعداد میں تیزی سے اضافے کی وجہ سے انہیں کہیں بھی بستر نہیں مل رہا ہے۔ اس کے نتیجے میں ، شروعاتی مریض ہوں یا کوئی بنا علامات والے مریض ہوں انہیں گھر میں ہی کورینٹائن ہونے کا مشورہ دیا جارہا ہے یا پھر انہیں سرکاری مرکز میں بھیج دیا جاتا ہے۔ حکومت نے مریضوں کے لئے کچھ محفوظ مکانات بھی قائم کردیئے ہیں جن کے گھر میں کورینٹائن ہونا ممکن نہیں ہے۔ کولکاتا کے تمام کوویڈ اسپتالوں کو شامل کرتے ہوئے آئی سی یو کے پاس صرف 948 بستر ہیں جب کہ وینٹیلیٹروں کی تعداد صرف 395 ہے۔ ماہرین صحت کا کہنا ہے کہ اتنے کم تعداد میں آئی سی یو اور وینٹیلیٹروں سے اس وبا کا مقابلہ کرنا ممکن نہیں ہے۔ معاملے کو بے قابو ہوتے ہوئے دیکھ کر حکومت نے اب کچھ نجی اور سرکاری اسپتالوں کو بستروں کی تعداد بڑھانے کا مشورہ دیا ہے۔ لیکن مریضوں کے مقابلہ میں یہ تعداد اونٹ کے منہ میں زیرہ جیسا ہی ہے۔ماہرین کا کہنا ہے کہ حکومت نے شروع سے ہی کرونا سے نمٹنے کے لئے کوئی ٹھوس منصوبہ مرتب نہیں کیا تھا۔کبھی غیر مقفل بعض اوقات ہفتے میں دو دن جیسے سخت لاک ڈاو¿ن فیصلے۔ یہ واضح ہے کہ وہ اس فیصلے سے قاصر ہے کہ انفیکشن سے بچنے کے لئے کیا کرنا ہے۔ اس نے بار بار متعدد کمیٹیاں تشکیل دیں اور متعدد بار پروٹوکول کو تبدیل کیا۔اس کے علاوہ مریضوں کے علاج اور مرنے والوں کے جنازے کے لئے کوئی ٹھوس طریقہ کار نہیں بنایا گیا۔ اسی وجہ سے ریاست میں اکثر جاں بحق افراد کے اہل خانہ کی ناراضگی منظر عام پر آتی ہے۔ ماہر ڈاکٹروں کا کہنا ہے "حکومت کی سابقہ ??غلطیوں سے سبق لیتے ہوئےاب بھی کوتاہیوں کو دور کرنے کے لئے پہل کرنی چاہئے۔ لیکن فی الحال حکومت کے روئے سے ایسا کوئی اشارہ نہیں مل سکا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ حکومت روزانہ مریضوں اور ہلاک ہونے والوں کے اعدادوشمار کی اطلاع دہندگی کے ذریعے ہی اپنی ذمہ داری قبول کرتی ہے۔ ایسی صورتحال میں عام لوگوں کو طویل عرصے تک صحت کے نظام کی بدحالی کا سامنا کرنا پڑے گا۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Leave A Reply

Your email address will not be published.