Take a fresh look at your lifestyle.

مسجد ،مندر، گردوارا او چرچ احاطے کی مٹی کو ملاکر درگا مورتی کا چہرہ تعمیر

کولکاتا،14،ستمبر:کولکاتا کی ایک درگواتسو کمیٹی نے کرونا دور میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی کی ایک جدید مثال قائم کی ہے۔کمیٹی نے اس کے درگا مجسمے کا چہرہ، مسجد ، چرچ اور گردوارے کے احاطے سے لائی گئی مٹی سے تیار کیاگیا ہے۔کولکاتا کے بھوانی پور چکربیریہ سروجینن کے اس اقدام کی وسیع پیمانے پر تعریف کی جارہی ہے۔ پورنیندو دے جس نے مورتی کو ڈیزائن کیا تھا ، انہوںنے کہا کہ یہ روایت صدیوں سے چل رہی ہے کہ مزدوروں کے صحن سے لائی گئی مٹی سے درگا کے مجسمے کی تعمیر شروع کی جائے لیکن فرقہ وارانہ ہم آہنگی کا پیغام دینے کے لئے ہمارے پاس مندر ، مساجد ، گرجا گھر اور گرودوارے ہیں۔درگا مجسمے کا مٹی والا منڈیلا صحن سے لائی گئی مٹی سے تیار کیا گیا ہے۔ بنگال میں درگا پوجا ایک تہوار ہے جس میں تمام ذات مذہب ، طبقے کے لوگ مل کر خوشی مناتے ہیں۔ پورنیندو دے نے مزید کہا کہ ‘تاہم ہم صدیوں پرانی روایت کو بھی برقرار رکھے ہوئے ہیں۔مزدوروں کے صحن سے لائی گئی مٹی مکھل منڈل تیار کرنے میں بھی استعمال ہوتی رہی ہے۔ نہ صرف یہ کہ سیاسی جماعتوں کو متحد کرنے کےلئے ترنمول کانگریس ، کانگریس ، سی پی آئی (ایم) اور بی جے پی کے پارٹی دفاتر سے مٹی لا کر اس میں ملا دی گئی ہے۔ پولس اہلکاروں کے اعزاز میں پولس اسٹیشن سے بھی مٹی لے کر ملائی گئی ہے ۔ کلب کے ایک عہدیدار نے کہا کہ ہم چاہتے ہیں کہ تمام جماعتوں اور سیاسی جماعتوں کے لوگ متحد ہو کر کرونا کی وبا کا مقابلہ کریں۔کرونا کے خلاف لڑائی میں اسے پہلی لائن میں کھڑے پولس اہلکاروں کے اعزاز میں مختلف تھانوں کی مٹی کو لاکر ملایا گیا ہے۔ اہم بات یہ ہے کہ بھوانی پور چکربیریا سروجنن کی پوجا کا یہ 75 واں سال ہے ، حالانکہ کرونا کی وبا کے پیش نظر کوئی بڑا پروگرام منعقد نہیں کیا جارہا ہے ، لیکن اس کی پوجا بہت چھوٹے پیمانے پر کی جائے گی۔ دونوں پنڈال اور شبیہہ چھوٹا ہوگا۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments are closed.