Take a fresh look at your lifestyle.

کیا گورنر دھنکھر ’پہاڑ‘فتح کرنے آئے ہیں؟

0

سلی گوڑی،27اکتوبر: مغربی بنگال کے گورنر جگدیپ دھنکر ایک بار پھر شمالی بنگال آرہے ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ یکم نومبر کو ، وہ شمالی بنگال کے غیر اعلانیہ دارالحکومت سلی گوڑی آئیں گے۔ اس دن وہ میڈیا کا بھی سامنا کریں گے۔ یہ صرف تین ہفتوں میں ایک ماہ سے بھی کم عرصہ میں دو بار سلی گوڑی کا گورنر کا دورہ ہوگا۔ یہاں کے سیاسی حلقوںمیں طرح طرح کی قیاس آرائیاں شروع کردی گئیں ہیں۔ گورنر کے اس دورے کو خاص طور پر وزیر اعلی ممتا بنرجی کے ماسٹر اسٹروک کے پیش نظر ڈمیز کنٹرول کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔
قابل ذکر ہے کہ ترنمول کانگریس کی سپریمو ممتا بنرجی نے اپریل تا مئی 2021 میں ہونے والے مغربی بنگال کے اسمبلی انتخابات میں ماسٹر اسٹروک کھیلا ہے۔ ایک طرف انہوں نے ترنمول کانگریس میں جنگل محل میں قبائلی تحریک کا چہرہ چھدرد مہتو کو شامل کیا ہے ، دوسری طرف گورکھا جن مکتی مورچہ کے سربراہ بمل گورنگ ، جو درجلنگ پروتتی خطہ (پہاڑ) کے گورکھوں کی تحریک کا چہرہ بھی ہیں۔ میں ایم ایل اے میں کھڑا ہوں۔
غور طلب ہے کہ بمل گورنگ ، جو ایک بار بی جے پی کے ایک زبردست حامی تھے ، تین سال زیر زمین دکھائی دینے کے بعد ، اچانک 21 اکتوبر کو کولکاتاآئے ، جب وہ بالکل نئے اوتار میں نظر آئے۔ وِمل گورنگ ، جو کبھی ممتا بنرجی کے سخت مخالف تھے ، اب ممتا مے نظر آئے۔ وہ ممتا بنرجی کی تعریف کرتے نہیں تھکتے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ ”ہم ممتا بنرجی کو مسلسل تیسری بار مغربی بنگال کی وزیر اعلی بنتے دیکھنا چاہتے ہیں۔ کیوں کہ ، انہوں نے پہاڑی قبائل اور پورے دارجلنگ پارویتی خطے کی ترقی کےلئے بہت سے کام کیے ہیں“۔
بملگورنگ نے کولکاتا میں میڈیا سے خطاب کرتے ہوئے کہا ،”اب ہم بی جے پی سے مایوس ہوگئے ہیں۔ ہم نے ایک یا دو نہیں بلکہ تین بار مسلسل بی جے پی کو دارجلنگ پارلیمانی حلقہ انتخاب دیا۔ اس کے باوجود بی جے پی نے ہمارے لئے کچھ نہیں کیا“۔
وزیر اعظم نریندر مودی چھ سال تک وزیر اعظم ہیں۔ تاہم ، انہوں نے بھی دارجلنگ خطے اور اس کے عوام کے مسائل حل کرنے کی طرف ایک قدم نہیں اٹھایا۔ یہی وجہ ہے کہ ، اب ہمیں بی جے پی اور بی جے پی کی قیادت پر کوئی اعتماد نہیں ہے۔ ہم نے ان اور این ڈی اے سے تعلقات توڑے ہیں۔
اب ، ہمیں ممتا بنرجی پر پورا اعتماد ہے اسی لئے ہم ان کے ساتھ مل کر کام کریں گے۔ ہم اگلے سال 2021 کے مغربی بنگال اسمبلی انتخابات میں ممتا بنرجی کو جیتنے کی پوری کوشش کریں گے۔ ہم شمالی بنگال کی ہر نشست پر ان کی شاندار فتح کو یقینی بنانے کےلئے ہر ممکن کوشش کریں گے۔ اس سے بی جے پی کی بے چینی بڑھ گئی ہے۔وہ ہر ممکن طریقے سے ڈیمیزکنٹرول میں رہی ہیں۔
ان تمام سیاسی منظرناموں میں گورنر جگدیپ دھنکھر کے بارے میں بات کرتے ہوئے ، اس سے قبل انہوں نے 9 اکتوبر کو شمالی بنگال کا دورہ کیا تھا۔ انہوں نے ریاستی مہمان رہائش گاہ (سلی گوڑی) میں پریس کانفرنس کی تاکہ علی پوردوار کے وپل رائے کے اہل خانہ سے ملاقات کرکے اور ان کی مدد کرکے جو کولکاتا واپس آسکیں ، جو لداخ‘ہند -چین سرحدی گلوانمیں شہید ہوئے تھے۔ جہاں انہوں نے مغربی بنگال حکومت پر کڑی تنقید کی۔ کہا جاتا تھا کہ ممتا بنرجی حکومت ناکام ہوچکی ہے۔ ریاست میں امن وامان پریشان کن ہے۔ افسران اور پولیس سرکاری ملازموں کی بجائے سیاسی ملازمین کی حیثیت سے کام کر رہے ہیں۔ ریاست میں انسانی حقوق کی پامالی کی جارہی ہے۔ ہیومن رائٹس کمیشن بھی انسانی حقوق کے تحفظ میں ناکام رہا ہے۔ انہوں نے ریاست میں صدر کی حکمرانی کی بھی وکالت کی۔
ساتھ ہی انہوں نے ہندوستان کے وزیر اعظم نریندر مودی کی تعریف کی۔ انہوں نے کہا کہ ”ہندوستان بدل رہا ہے۔ دنیا دیکھ رہی ہے۔ ہندوستان کے شان دار وزیر اعظم (نریندر مودی) عالمی رہنما کے طور پر ابھرے ہیں“۔ صرف یہی نہیں ، انہوں نے بالواسطہ طور پر گورک لینڈ کی امید بھی ظاہر کردی۔ کہا کہ ”کیا کبھی کسی نے سوچا ہے کہ کشمیر آرٹیکل 370 آزاد ہو گا؟ کیا کبھی کسی نے سوچا ہے کہ پرانے رام مندر کا معاملہ حل ہوجائے گا؟ ملک میں اس طرح کا ہر مسئلہ حل ہوجائے گا“۔ جب گورنر سے پوچھا گیا تو ، کیا وہ گورکھالینڈ کی علیحدہ ریاست کی توقع کرے گا؟ تو انہوں نے پھر جواب دیا کہ ”ملک میں ہر مشکل مسئلے کا حل ہے“!۔

 

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Leave A Reply

Your email address will not be published.