Take a fresh look at your lifestyle.

بنگال : ہائی ایمیونیٹی بننے سے کرونا کے اثرات میں کمی

0

کولکاتا،8،ستمبر:کوروناصحت یابی کی شرح میں مسلسل بہتری کے بعد اب مغربی بنگال آہستہ آہستہ کرونا کی وبا سے ہونے والے نقصان کا خطرہ کم ہوتاجارہا ہے۔حال ہی میں ایک نجی لیب نے ملک بھر میں سیرو پوزیٹیویٹی سروے کیا۔اس کے نتائج سے پتہ چلتا ہے کہ بنگال کے 23 فیصد اور کولکاتا کی 26 فیصد آبادی نے کرونا اینٹی باڈی تیار کی ہے۔ توقع کی جارہی ہے کہ یہ لوگ کرونا وائرس کے ساتھ رابطے میں آئے ہوں گے اور اس سے لڑنے کےلئے جسم میں استثنیٰ پیدا ہوگا جس نے انہیں باقی آبادی کےلئے ڈھال بنا دیا۔جولائی تا اگست میں کئے گئے سروے کے مطابق قومی سیرو-مثبت شرح 27 فیصد ہے۔ تائروکارے نامی ایک لیب نے ملک بھر میں سیرو سروے کیا ، جس میں کولکاتا سے 9041 افراد شامل تھے ، جبکہ بنگال کے 22589 افراد کو نمونے دیئے گئے تھے۔تائروکیئرکے منیجنگ ڈائریکٹر اے ویلومانی نے کہایہ خون پر مبنی سیرولوجی ٹیسٹ تھا۔ایچ آئی وی ایچ بی وی یا ایس سی وی وائرس کی شناخت کےلئے جس طریقے سے ٹیسٹ کئے جاتے ہیں وہی تھا۔ یہ جانچ ہمیں بتاتی ہے کہ آیا کسی خاص فرد کو کبھی بھی وائرس کا انفیکشن ہوا ہے۔یہی بات کرونا کے معاملے میں بھی پائی گئی۔ ایس ایس کے ایم اسپتال سے وابستہ ایک ڈاکٹر نے کہا کہ یہ بہت اچھا ہوگا اگر حکومت جون میں کے ایم سی کے کچھ وارڈوں میں کئے جانے والے ٹیسٹوں کی خطوط پر سیرو پوزیٹیویٹی کے پھیلاو¿ کو جاننے کےلئے اپنا سروے کرے۔مثبت معاملات کے ساتھ اس سروے سے صحت کے اہلکاروں کو یہ معلوم کرنے میں مدد ملے گی کہ ہم استثنیٰ کے کتنے قریب ہیں۔ ڈاکٹروں کے مطابق سروے کے اعداد و شمار حوصلہ افزا ہیں۔اس سے یہ ثابت ہوتا ہے کہ زیادہ تر کرونا کیس ہلکے تھے ساتھ ہی اچانک موت بھی۔ سب سے اہم بات یہ ہے کہ سروے سے پتہ چلتا ہے کہ ہم کمنیٹی کی استثنیٰ پیدا کرنے کی راہ پر گامزن ہیں اور ایک بار 50 سے 60 فیصد آبادی سیرو پازیٹو ہونے کے بعد یہ کامیابی بھی حاصل کرلی جائے گی۔ قابل ذکر ہے کہ مغربی بنگال میں بازیافت کی شرح 87 فیصد کے قریب پہنچ چکی ہے۔ اس سے استثنیٰ کا ارتقاءبھی یہ ثابت کررہا ہے کہ بنگال جلد ہی وبا سے پاک ہو جائے گا۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Leave A Reply

Your email address will not be published.