Take a fresh look at your lifestyle.

پارلیمنٹ میں کولکاتا پولس کے خلاف خصوصی استحقاق بل لایا جائے گا

0

کولکاتا 9 اکتوبر۔ آیندہ سال بنگال میں اسمبلی انتخابات ہونے والے ہیں۔ اس سے پہلے ہی بی جے پی نے اپنی سرزمین کو یہاں مضبوط بنانے کے لئے پوری طاقت لگائی ہے۔ جمعرات کے دن بی جے پی نے پارٹی رہنماو¿ں اور کارکنوں سمیت بے روزگاری اور پارٹی ورکروں کے قتل جیسے دیگر امن و امان کے خلاف ریاستی سکریٹریٹ (نبانو) چلو مہم کا آغاز کیا تھا۔ اس احتجاج کے دوران بی جے پی کارکنوں پر تشدد برپا کرنے اور توڑ پھوڑ کا الزام لگایا گیا ہے۔جس کے جواب میں شکایت درج کرانے پہنچے اراکین پارلیمنٹ کی کوئی بات سننے والا نہیں تھا اس سے ناراض بی جے پی یووا مورچہ کے صدر اور ممبر پارلیمنٹ تیجسوی سوریہ نے اب کہا ہے کہ ممتا حکومت کی جانب سے کولکاتا پولس کے عہدیداروں کے خلاف پارلیمنٹ میں استحقاق کی خلاف ورزی کے اقدام کو منتقل کرنے کی تجویز لائینگے۔ تیجسوی سوریہ نے بتایا کہ جوڑاسانکوں تھانے میں ممتا کے سرکاری پولس افسران نے بی جے پی کے تین ممبران پارلیمنٹ کو یرغمال بنا لیا۔ ارکان پارلیمنٹ یہاں بی جے وائی ایم کارکنوں پر بم حملے کی شکایت کرنے آئے تھے۔ ارکان پارلیمنٹ ایف آئی آر درج کرنا چاہتے تھے لیکن پولس انہیں تھانے لے گئی اور ان مقدمہ درج کرنے سے انکار کردیا۔ اپنے ٹویٹر ہینڈل پر ایک ویڈیو شیئر کرتے ہوئے تیجسوی سوریہ نے ممتا سرکار کو متنبہ کیا۔ انہوں نے لکھا کہ ممبر پارلیمنٹ نشیت پرمانک ، جیوتی موئے سنگھ مہتو اور وہ تھانے گئے تھے۔ اسے دو گھنٹے تھانے میں رکھا گیا۔آدھی رات کو پولس نے ہماری شکایت پر ایف آئی آر درج کی۔ تیجسوی سوریہ نے کہا ، ہمیں ممتا حکومت کے مغرور اور غلط کام کرنے والے پولس افسران کو آئینی طور پر سبق سکھایا جائے گا۔ اس کے خلاف استحقاق کی خلاف ورزی کی تحریک لائے گی۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Leave A Reply

Your email address will not be published.