Take a fresh look at your lifestyle.

تیلنی پاڑہ میں تشدد بھڑکانے کے الزام میں چندن نگر پولیس کمشنریٹ کی جانب سے مقدمہ درج

 

ہگلی16مئی ( عوامی نےوز بےورو ) ہگلی ضلع کے تیلنی پاڑہ میں تشدد بھڑکانے کے الزام میںآج چندن نگر پولیس کمشنریٹ کی جانب سے ہگلی لوک سبھا کی بی جے پی ایم پی لاکٹ چٹرجی اور بارکپور کے بی جے پی ایم پی ارجن سنگھ کے خلاف سی آر پی سی 41 کے تحت دفعہ 153A / 460A/ 469/505-6 کے ساتھ دھوکا دھڑی کا معاملہ بھی درج کیا گیا۔ حالانکہ آج لاکٹ چٹرجی نے ایک پریس کانفرنس بلاےا مگر اس دوران انہوں نے اس کے متعلق کوئی بات نہیں کی۔ انکے بدلے ان کے ایک قریبی پارٹی رکن نے صحافیوں کے سامنے ان تمام دفعات کے متعلق کہا کہ ہمیں افسوس ہے کہ ہم پر مذہبی دنگا فساد بھڑکانے کا الزام لگاےا گےاہے لیکن حیرانی اس بات پر ہے کہ ہم پر فورجری معاملہ بھی درج کیا گیا ہے۔ اس بارے میں انہوں نے کہا کہ ہم نے ایف آئی آر کی کاپی مکمل طور پر نہیں پڑھی ہے ، ہم عدالت جائیں گے۔ وہیں دوسری جانب آج ایک دفعہ پھر سے صحافیوں کے ساتھ ملاقات کرتے ہوئے تیلنی پاڑہ معاملے میں قصوروار چندن نگر کے پولیس کمشنر کو بتائی ہے۔ لاکٹ نے اور الزام لگائی کہ آخر دفعہ 144کے باوجود بھی اتنے سارے لوگ وہاں دنگا فساد کرنے کے لئے کہاں سے آگئے۔ پولیس ادھر ادھر کے لوگوں کو گرفتار کررہی ہے۔ بےقصوروں کو معذور کو اسکول کے ماسٹر کو اس لئے گرفتار کی ہے کہ وہ بی جے پی کے حمایتی ہیں ؟ لیکن اصل مجرم کی گرفتاری کیوں نہیں ہوئی ہے ابھی تک ؟ جسکی وجہ سے کتنے غریب لوگوں کے گھر اجاڑ دیا گیا ، لوٹ لیا گیا ، کپڑے بستر کھاٹ چولہا برتن سب توڑ پھوڑ کر برباد کردیا گیا۔ لاکٹ نے اور کہا کہ آج بہتوں ایسے مجبور لوگوں کے فون آرہے ہیں۔ میں اپنی پارٹی کے جانب سے ایسے لوگوں کی ہرطرح کی مدد کرونگی۔ انکے کھانے پینے برتن کپڑے سب کچھ میں ان تک پہونچاو¿گی۔ لاکٹ نے یہ بھی کہا کہ میں ڈی ایم سے ملنا چاہتی ہوں مگر وہ نہیں ملنا چاہتے ہیں۔ ساتھ ہی میں سی پی سے بھی رابطہ کرنے کی لگاتار کوشش کی مگر وہ ایک بار بھی نہیں ملے نہ ہی فون پر بات کیا۔ لاکٹ یہیں نہیں رکی انہوں نے سی پی پر تنزیہ لہجے میں بولی کہ اصل میں وہ ہم سے بات کریں گے تو انکا پتہ وزیر اعلیٰ کے یہاں سے کٹ جائے گا اسی لئے ہم سے ملنا نہیں چاہتے ہیں۔ انہوں نے اور کہا کہ گزشتہ کل سی پی چندن نگر کے ایم ایل اے سے ملاقات کئے ہیں اس لئے کہ وہ ترنمول کے ایم ایل اے ہیں۔ انہوں نے یہ بھی الزام لگائی کہ میٹنگ سے باہر آنے کے بعد ایم ایل اے سے پوچھا گیا کہ آپ کی میٹنگ سی پی کے ساتھ کس بات پر تھی تو ایم ایل اے کا جواب تھا کورونا کے معاملے میں۔ اور جب سی پی سے میٹنگ کے بارے میں پوچھا گیا تو انہوں نے کہا تیلنی پاڑہ کو لیکن بات ہوئی ہے۔ اب بتائیں ان دونوں کی باتیں کہاں ایک ہوئی۔ لیکن مجھے پتا ہے نوبناسے ایم ایل اے کے زریعے سی پی کے پاس ہدایت آئی تھی اور سی پی آج اسی ہدایت پر کام انجام دیئے ہیں۔ پریس میٹنگ کے بعد ایک بار پھر وہ تیلنی پاڑہ جانا چاہتی تھی مگر اجازت نہیں دی گئی۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments are closed.