Take a fresh look at your lifestyle.

مشرقی ہندستان کے سب سے بڑے ٹیکسٹائل سنٹرمیں سناٹا

0

کولکاتا،6اگست: ٹیکسٹائل ‘ان صنعتوں میں سے ایک ہے جسے کورونا نے سب سے زیادہ متاثر کیا ہے۔ پہلے نوٹ بندی اور پھر جی ایس ٹی نے ٹیکسٹائل کی صنعت کو اپنے گھٹنوں تک پہنچا دیا۔ اب اس لاک ڈاو¿ن نے مشرقی ہندوستان کا سب سے بڑا ٹیکسٹائل مرکز کولکاتاکے بڑا بازار کی حالت خراب کردی ہے۔ لگ بھگ 15ہزار تاجر اپنی دکانیں کھول رہے ہیں ، لیکن صارفین غیر حاضر ہیں۔ کچھ تاجروں کے مطابق ، کاروبار پٹری سے اتر گیا ہے۔ پہلے ، جہاں بازار میں صبح سے رات تک جوش و خروش رہتاتھا ، آج خاموشی ہے۔ تاجر مالی بحران میں پھنس رہے ہیں۔ کم و بیش پورے ملک کی ٹیکسٹائل انڈسٹری کا معاملہ ایسا ہی ہے۔ ٹیکسٹائل کی صنعت ان دنوں ایک بڑے بحران سے گذر رہی ہے۔100 دن میں 15.5 لاکھ کروڑ کا نقصان ، شادی کا موسم بھی ختم ہوچکا ہے۔ اس وقت ، تاجر درگا پوجا کے کاروبار میں مصروف تھے۔ وہ بڑھتے ہوئے انفیکشن کی وجہ سے خستی ہے۔ ملک کے مختلف خطوں میں کئے گئے سروے کے مطابق ، چھوٹے اور درمیانے درمیانے ٹیکسٹائل کے تاجروں کو گذشتہ 100 دنوں میں تقریبا.5 15.5 لاکھ کروڑ روپے کا نقصان ہوا ہے۔ اگر یہ صورتحال کچھ دن مزید جاری رہی تو 20 فیصد تاجر اپنا کاروبار بند کرنے پر مجبور ہوجائیں گے۔ کہا جاتا ہے کہ لاک ڈاو¿ن کی وجہ سے آمدنی رک گئی ہے لیکن اخراجات کا کوئی خاتمہ نہیں ہے۔ ملازمین کو تنخواہ دینے ، دکانوں کا کرایہ ، بجلی کا بل ، حکومت کو مختلف ٹیکس دینے کا عمل بلا روک ٹوک جاری ہے۔ حکومت نے کمزور طبقات کو مفت اناج ، مالی امداد دی ، دیگر صنعتوں کےلئے امدادی پیکیج کا اعلان کیا ، لیکن ٹیکسٹائل کی صنعت کےلئے کچھ نہیں کیا۔ جبکہ زراعت کے بعد ، یہ ملک میں سب سے زیادہ ملازمت کی صنعت ہے۔ یہ صنعت سالانہ 10 لاکھ کروڑ روپے کا کاروبار کرتی ہے۔ 7 کروڑ سے زیادہ افراد براہ راست اور بالواسطہ طور پر اس صنعت سے وابستہ ہیں۔ مشرقی ہندوستان کا ٹیکسٹائل مرکز ایک طرح سے کولکاتا کا ٹیکسٹائل مرکز ہے۔ ممبئی ، بھلوارہ ، سورت ، پلی ، کوئمبٹور سے کپڑے یہاں آتے ہیں اور پھر بنگال ، بہار ، جھارکھنڈ ، اوڈیشہ ، مدھیہ پردیش ، شمال مشرقی ریاستوں ، پڑوسی ملک نیپال ، بنگلہ دیش میں کپڑے کا کاروبار ہوتا ہے۔ وہ کہتے ہیں کہ کورونا دور میں ٹیکسٹائل انڈسٹری کی حالت خستہ ہوگئی ہے۔ تاجروں کی صورتحال دگر گوہو رہی ہے۔ کاروبار میں زبردست کمی واقع ہوئی ہے۔ یہ کہنا مشکل ہے کہ یہ صنعت کب پٹری پر ہوگی۔ جب تک کورونا وائرس پر قابو نہیں پایا جاتا ، صورتحال میں بہتری کا کوئی امکان نہیں ہے۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Leave A Reply

Your email address will not be published.