Take a fresh look at your lifestyle.

”امفان“ طوفان ساحلی علاقوں میں تباہی مچاسکتا ہے

0

کولکاتا19مئی:بنگال کے ساحل سے ٹکرانے والا”امفان“ طوفان میں شدت آنے کے بعد حکومت نے اس کا مقابلہ کرنے کی تیاریاں شروع کردی ہے۔اندازہ لگایا جارہا ہے کہ یہ طوفان ساحلی علاقوں میں بڑی تباہی مچا سکتا ہے۔تباہی کی صورت میں جلد سے جلد امدادی کام شروع کرنے کیلئے بحریہ اور کوسٹ گارڈ کو پہلے ہی ہائی الرٹ رہنے کی ہدایت کردی گئی ہے۔جنوبی 24 پرگنہ کے ساحلی علاقوں کیلئے 9ٹیمیں تشکیل کی گئیں ہیں۔ ضلعی انتظامیہ کے مطابق کاک دیپ اور کیننگ سب ڈویژن میں این ڈی آر ایف کی 5 ٹیمیں اور ایس ڈی آر ایف کی 4 ٹیمیں تعینات کی گئی ہیں۔ ایس ڈی آر ایف کی 4 ٹیمیں گھورامارہ، موسونی، جی پلاٹ، گوسابہ چھوٹے مالکھی جزیرے پر تعینات ہیں۔دوسری طرف، ساگر کاکدیوپ،نامخانہ، پاتھر پرتیما، گوسابہ میں این ڈی آر ایف کی 5 ٹیمیں تعینات ہیں۔ اس کے علاوہ ساحلی علاقوں کے رہائشیوں کو محفوظ مقامات پر منتقل کرنے کا کام بھی کام شروع کر دیا گیا ہے۔ایک ایسے وقت میں جب حکومت کورونا وائرس سے نمٹنے کی کوشش کررہی ہے۔ایسے میں حکومت کیلئے لوگوں کی منتقلی اور معاشرتی فاصلے کو برقرار رکھنا بہت ہی ضروری ہے۔دوسری جانب امفان طوفان سے پیدا ہونے والے حالات کا مقابلہ کرنے کیلئے مقامی انتظامیہ اور اعلیٰ افسران مسلسل میٹنگ کررہے ہیں۔ ساحلی رہائشیوں کو نکالنے کے انتظامات پہلے ہی کردیئے گئے ہیں۔مائیک کے ذریعہ لوگوں کو خطرات سے آگاہ کیا جارہا ہے۔امفان طوفان کا فاصلہ بنگال سے آج مزید کم ہوگیا ہے۔علی پور محکمہ موسمیات کے مطابق امفان طوفان ساگر دیپ سے 690 کلومیٹر جنوب میں پیر کی صبح 5.30 بجے تھا۔ ساحلی علاقہ دیکھا میں جنوب مغرب میں 940 کلومیٹر۔ 1040 کلومیٹر جنوب اور جنوب مغرب میں کیخوپارہ۔ یعنی اس کا مقام ریاست سے ایک ہزار کلومیٹر سے بھی کم فاصلہ پر ہے۔اتوار کی دوپہر 12 بجے تک یہ طوفان’شدید چکروتی طوفان‘میں تبدیل ہوچکا تھا۔ محکمہ موسمیات بتایا کہ اگلے 12 گھنٹوں میں طوفان میں مزیدشدت آنے کا امکان ہے۔گزشتہ 6 گھنٹوں میں طوفان کی رفتار میں مزید شدت آئی ہے۔ پہلے یہ 6 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے آگے بڑھ رہا تھا۔ اتوار کے بعد سے 12 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے آگے بڑھ رہا ہے۔
پیر کی صبح یہ جنوب خلیج کے وسط اور مغرب میں واقع تھا۔ اس کا طول بلد شمال میں 13.2 ڈگری، اس کا طول بلد 7.3 ڈگری مشرق تھا۔محکمہ موسمیات کے مطابق اس کا فاصلہ دھیرے دھیرے کم ہورہا ہے اور طوفان میں شدت کی وجہ سے خطرے کا امکان بڑھ گیا ہے۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Leave A Reply

Your email address will not be published.