Take a fresh look at your lifestyle.

وجئے ورگیہ انسانی حقوق کمیشن کے تحت بنگال پولس کے خلاف کورٹ جائیں گے

کولکاتا،10اکتوبر: بی جے پی کے قومی سکریٹری کیلاش وجئے ورگیہ بنگال کے کلاف یہ الزام لگایا ہے کہ سکریٹریٹ مارچ کے دوران پولس نے بم اندازی کر تے ہوئے حقوق انسانی کو پامال کیا ہے اب وہ فورس کی اس حیواناتی عمل کے خلاف انصاف کے لئے کورٹ تک جائیں گے۔ انہوں نے ایسا قدم اٹھا کر حکومت مغربی بنگال کے خلاف بھی سیدھا نشانہ سادھا ہے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ترنمول پارٹی نے شہر میں ہاتھرس کے خلاف ریلی نکال کر کوویڈ-19 کا کھل کر مذاق اڑایا ہے۔ یہ بھی کہا کہ کسان بل کے خلاف بھی ممتا حکومت کے خلاف اب تک کوئی بھی ایکشن نہیں لیا گیا۔ ورگیہ نے یہ بھی الزام لگایا کہ حکومت کی پولس اپوزیشن پارٹی سے اس طرح کا سلوک کرتی ہے۔ سکریٹریٹ مارچ کے خلاف بنگال پولس کا ایکشن جارحانہ تھا اور بی جے پی کے خلاف لا تعداد بے تکے الزامات بھی بر سر اقتدار پارٹی نے لگائے۔
وجئے ورگیہ کا یہ بیان اس وقت سامنے آیا جب پولس نے ان کے اور مکل رائے کے خلاف کیس درج کیا۔ یہی نہیں پولس نے دلیپ گھوش ، ارجن سنگھ ،لاکٹ چٹرجی کے خلاف بھی تشدد و تخریب کاری کا کیس درج کیا۔ اپیڈمک ڈیزیز ایکٹ کے تحت ۔ پولس نے بی جے پی مارچ کے خلاف غیر قانونی طور پر بھیڑ، تشدد ، عوامی املاک کو برباد، حکومت کے ملازمین پر حملے کے خلاف کئی دفعات لگا کر کیس درج کیا۔ پولس نے اپنے دفاع میں اقرار کیا کہ بی جے پی کے ایک حامی کے پاس سے گولی بھر اپستول بھی بر آمد کیا۔ اس پستول کا لائسنس جنوری2021تک کا تھا۔ بی جے پی کا ایک الزام یہ بھی ہے کہ وہ یہاں اقلیتی کارڈ کھیل رہی ہے۔ اس مخصوص فرقے کو یہ ہر روایتیں بخش رہی ہیں تا کہ ان کا ووٹ بکس خالی نہ ہوپائے۔

Get real time updates directly on you device, subscribe now.

Comments are closed.